یونائیٹڈ ٹی وی کے سفر کا ایک سال

مصنف، اسد علی درازی

آج سے ایک سال قبل کی بات ہے میرے عزیز دوست الیاس عباسی نے ایک ٹریول ایجنسی کی بنیاد رکھی تھی جس کا تذکرہ میں نے فیس بک پر دیکھا اور دل میں ایک خیال آیا کہ اس کو بروئے کار لاتے ہوئے سندھ میں سیاحت کی فروغ کے لئے کام کیا جائے۔
میں نے اسی وقت الیاس عباسی سے فون پر بات کی اور ملاقات کے لےا وقت طلب کیا جس پر انہوں نے شام میں شاہراہ فیصل پر واقع یونائیٹڈ ہاسٹل میں اپنے دفتر پر ملنے کا کہا۔
شام کے وقت میں اپنے دفتر سے نکلا اور سیدھا الیاس بھائی کے پاس پہنچا۔ ان کے دفتر کے سامنے رک کر انہیں فون ملایا اور بتایا کہ جناب میں آپ کے دفتر کے سامنے کھڑا ہوں جس پر انہوں نے دفتر کا دروازا کھول کر اپنے مخصوص انداز میں استقبال کیا اور دفتر میں اندر بلالیا۔
بات چیت کا سلسلہ شروع ہوا۔ اتنے میں چائے بھی آگئی اور جس کام کے لئے میں آیا تھا یعنی “سندھ میں سیاحت کا فروغ”۔ اس موضوع پر باتوں کا سلسلہ جاری ہوگیا۔ الیاس بھائی نے بتایا کہ ان کی ٹیم اس وقت بلوچستان کے دورے پر نکلی ہوئی ہے اور وہاں کے تمام سیاحتی مقاموں کا جائزہ، ہوٹل مالکان سے ملاقاتیں اور تمام ضروری معلومات حاصل کرنے میں مصروف ہے۔
میں نے الیاس بھائی سے پوچھا کہ سندھ میں سیاحت کے فروغ کہ حوالے سے بھی کوئی منصوبہ زیرِ غور ہے یا نہیں؟
انہوں نے بتایا کہ جی ہاں سندھ میں سیاحتی مقامات کی فروغ، تشہیر اور سیر تفریح کے دورے کروانے کے لئے بھی اپنی ٹیم کو معمور کیا ہوا ہے۔
مجھے بہت خوشی ہوئی۔ گفتگو کا سلسلہ چلتا رہا۔ باتوں باتوں میں صحافتی اداروں کے حوالے سے بھی باتیں چل پڑیں جس پر میں میرا خیال تھا کہ “سندھ کی بدقستمی ہے کہ سندھ کو آج تک کوئی حقیقی ترجمان ادارہ نہیں مل سکا ” اور یہاں سے ہم دونوں کا اداروں کی کارکردگی کا رونا شروع ہوگیا۔
اتنے میں مجھے نہ جانے کہاں سے جلال آگیا۔
میں نے الیاس بھائی کو تجویز کیاکہ کیوں نہ اپنا ایک ویب چینل متعارف کروایا جائے؟
انہوں نے کہا خیال تو اچھا ہے اور میرے دل میں بھی یہ خواہش تھی لیکن آغاز کیسے ہوگا؟ کیا ہمارے پاس وسائل موجود ہیں؟ مجھے تو اس کام کا کوئی خاص علم نہیں ہے۔
چونکہ میں میڈیا میں کام کر چکا تھا اور ان عوامل سے متعلق علم رکھتا تھا تو میں نے کہا جناب، مجھے معلوم ہے سب کیسے ہوگا اور ہم محدود وسائل میں بھی اس سفر کی شروعات کر سکتے ہیں۔
جس پر الیاس بھائی نے کہا اگر ایسا ہے تو یہ سلسلہ آپ کے حوالے۔ میری طرف سے تمام لاگت، میرا دفتر اور دیگر وہ تمام چیزیں جو آپ کو درکار ہیں، میں فراہم کروں گا۔ آپ سلسلہ شروع کریں۔
اب مسئلہ یہ تھا کہ نام کیا رکھا جائے؟ دونوں نے مختلف تجاویز دیں۔ میں نے کہا آپ کے تمام کاروبا یونائیٹڈ کے نام سے ہی منسوب ہیں تو کیوں نہ یونائیٹڈ ٹی وی ہی نام رکھا جائے؟ جس پر اتفاق ہوا یہی نام طے پایا۔
اب سب سے اہم چیز تھی ویب سائٹ۔ اس کے لیئے ایک دوست نے ایک ویب ڈولپر سے ملاقات کروائی۔ مجھے اسکی باتیں سمجھ میں آئیں اور میں نے ویب سائٹ کی ذمہ داری اس کے سپرد کردی۔
کچھ دنوں بعد ویب سائٹ تیار ہوگئی اور ہم نے اس پر خبریں رکھنا شروع کردیں۔ اب یہاں سے ایک نئے صحافتی ادارے کا آغاز شروع ہوگیا۔
اب خبروں کی ذمہ داری تو میں نے اپنے سر لے لی لیکن وڈیو ایڈیٹنگ کے لئے ایک ایڈیٹر درکار تھا۔ جس کے لئے میں نے اپنے ایک دوست پرویز شیخ جوکہ ایک پیشہ ور ایڈیٹر تھا، سے رابطہ کیا اور اپنے اس نئے سلسلے کے بارے میں بتایا اور اسے اپنی ٹیم کا حصہ بننے کو کہا جس پر اس نے کام کرنے کے لئے ہاں کہا اور دوسرے دن سے دفتر آنا شروع کردیا۔
اب آہستہ آہستہ دفتر اور اسٹاف میں اضافہ ہونے لگا۔ سلسلہ چل پڑا تھا۔ سندھ کی ترجمانی کرنے والا یہ پہلا اردو ویب چینل تھا۔ یونائیٹڈ ٹی وی سے قبل بھی سندھ کی بیشتر ویب سائٹس تھی لیکن وہ سندھی، اردو اور انگریزی زبانوں میں کام کر رہی تھیں۔ لحاظہ یونائیٹڈ ٹی وی مکمل اردو میں اپنا کام کر رہی تھی۔
اب اس سلسلے کی شروعات ہی ہوئی تھی تو الیاس بھائی کا ایک دوست سالار لطیف جو اب میرا بھی بہت قریبی اور عزیز دوست ہے، اس وقت خیرپور میں تھا اور وہاں سے ہمیں اپنے تجربات اور ہدایات دیتے تھے کہ ایسے ایسے کرنا چاہیئے۔ کچھ وقت بعد سالار بھائی خود کراچی آگئے اور ہماری ٹیم میں اہم رکن کے طور پر شامل ہوئے۔ سالار بھائی یونائیٹڈ ٹی وی کے مینیجبگ ڈائریکٹر ہیں۔ سالار بھائی کی اردو، ادب اور میڈیا کے اخلاقیات پر بڑی گرفت تھی اس لئے وہ میرے اور یونائیٹڈ ٹی وی کے لئے بہت بہتر ثابت ہوئے۔ ان کے آنے کے ساتھ یونائیٹڈ ٹی وی کے معاملات مزید بہتر اور معیاری ہوگئے۔
اب آہستہ آہستہ بہتری کی طرف جا رہے تھے۔ لوگوں نے محبت دینا شروع کی تو یونائیٹڈ ٹی وی کے لئے ایک اور مسیحا الیاس بھائی کے چھوٹے بھائی عبدالنبی بھی ہماری ٹیم کا حصہ بن گیا۔ عبدالنبی کے جذبے اور “آل ٹائم کمٹمینٹ” نے یونائیٹڈ ٹی وی کو مزید ترقی اور بلندی عطا کی۔
اب مل کر نئی نئی اسٹوریز اور معیاری خبریں لگانا شروع کردیں۔ لوگوں کی جانب سے محبتوں کا سلسلہ جاری تھا۔ یونائیٹڈ ٹی وی کی فیملی بڑھتی جا رہی تھی جو سلسلہ آج تک جاری ہے۔
قصہ مختصر کہ آج یونائیٹڈ ٹی وی کی اس ترقی اور کامیابی کے سفر کو ایک سال مکمل ہوگیا۔ جس مقصد کے لئے ہم نے یہ ادارہ بنایہ تھا “اردو زبان میں سندھ کی ترجمانی” کا سلسلہ، اس کے حصول کے لئے آج بھی ہم اپنی نیک نیتی اور محنت جاری رکھے ہوئے ہیں۔
میں یونائیٹڈ ٹی وی کا ایک سال مکمل ہونے پر اپنے عزیز دوستوں، سی سی او میاں الیاس عباسی، ایم ڈی سالار لطیف، عبدالنبی عباسی اور ہماری ٹیم کے تمام اراکین کو مبارک دیتا ہوں اور امید کرتا ہوں کہ ایسے ہی غریب، مستحق اور سندھ کی عوام کی ترجمانی کا یہ سلسلہ جاری رکھیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں