دنیا کو لاک ڈاؤن کے منفی اثرات کا احساس ہورہا ہے، اسد عمر

کراچی (ویب ڈیسک) وفاقی وزیر برائے منصوبابندی اسد عمر نے کہا ہے کہ حکومت کی کوشش ہے کہ جولائی کی آخر تک ملک میں کرونا وائرس کے یومیہ ایک لاکھ ٹیسٹ کیے جائیں۔ انہوں نے کہا کہ کرونا وائرس کے ابتدائی دنوں میں ملک بھر میں پانچ سو ٹیسٹ ہورہے تھے جو تعداد اب تیس ہزار تک پہنچائی گئی ہے تاہم وفاقی حکومت کی کوششیں جاری ہیں کہ یہ تعداد مزید بڑھائی جائے۔
وفاقی وزیر کا مزید کہنا تھا کہ وفاقی حکومت ہسپتالوں میں آکسیجن بڑھانے کے لئے صوبوں کی معاونت کرے گی۔ انہوں نے عوام سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ اگر ہمارے اعمال کرونا وائرس کے پھیلاؤ کا باعث بن رہے ہیں تو انہی کو بروئے کار لاتے ہوئے ہم وائرس سے چھٹکارہ بھی پا سکتے ہین جس کے لئے ہمیں نظم و ضبط قائم رکھنا ہوگا۔
لاک ڈاؤن سے متعلق ان کا کہنا تھا کہ دنیا کےدیگر ممالک میں لاک ڈاؤن کے معیشت پر مرتب ہونے والے منفی اثرات کا احساس اب کیا جا رہاہے جبکہ پاکستان میں بہت پہلے کیا گیا تھا اس لئے ہم اب بھی “سمارٹ لاک ڈاؤن” کو برقرار رکھتے ہوئے صرف ان مقامات کو سیل کریں گے جہاں کرونا وائرس کے زیادہ کیسز ہوں اور وہاں سے وائرس کے دیگر مقامات تک پھیلنے کا خدشہ ہو۔ ایسے عمل کا آغاز آج لاہور سے کیا جارہا ہے جو بعد میں ملک کے دیگر علاقوں میں بھی کیا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں