مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کی بھارتی سازش کے خلاف سندہ میں احتجاجی ریلیاں

کراچی(یونائٹڈ نیوز)مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت ختم کرنے کے خلاف سندہ کے چھوٹے بڑے شہروں میں ریلیاں نکال کر بھارتی حکومت کے خلاف نعریبازی کی گئی۔ عمرکوٹ میں کشمیری بھائیوں کےحق میں ڈگری کالج ،ہائی اسکول ون اور ہائی اسکول ٹو کے طلبا نے ریلی نکال کر بھارت کے خلاف نعرے لگائے۔ میرپورماتھیلو میں کشمیری عوام سے اظہارِ یکجہتی کے لئے اسٹنٹ کمشنر کی قیادت میں ریلی نکالی گئی، جس میں کشمیریوں پر مظالم کی سخت مذمت کی گئی۔دادو میں سول سوسائٹی کی جانب سے ریلی نکال کر مودی کے پتلے کو آگ لگادی گئی۔ ٹھٹہ مین مختلف اداروں کی جانب سے گورنمینٹ ڈگری کالج سے پرنسپل مصطفیٰ چارن، سرفراز سرائی اور دیگر کی قیادت میں ریلی نکالی گئی۔ کشمور میں کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے تحت نادرا چوک سے لیکر پریس کلب تک احتجاجی ریلی نکالی گئی۔ جس میں سول سوسائٹی، طلبا اور استاتذہ کی بڑی تعداد شامل تھی۔ کندہ کوٹ میں ضلعی انتظامیہ کی جانب سے بھارتی مظالم کے خلاف اور مظلوم کشمیریوں سے اظہار یکجہتی کے لئے ڈپٹی کمشنر آفیس سے گھنٹہ گھر چوک تک نکالی ریلی نکالی گئی۔ ریلی میں محکمہ تعلیم، محکمہ روینیو کے افسران، سرکاری اسکولوں کے اساتذہ اور سینکڑوں طلبہ نے شرکت کی۔ ریلی کے شرکاء نے مودی اور بھارت کے خلاف شدید نعرے بازی بھی کی۔ تنگوانی میں کشمیری بھائیوں سے یکجہتی کے لئے اساتذہ اور طلبا نے ریلی نکال کر بھارتی حکومت کے خلاف نعرے بازی کی۔ اس موقع پر ریلی کے شرکاء کا کہنا تھا کہ بھارت کشمیریوں کو تشدد کا نشانہ بنا کر تحریکِ آزادی کو دبا نہیں سکتا۔ پاکستانی کشمیر کی آزادی کی تحریک میں برابر کے شریک ہیں۔ شرکاء کا کہنا تھا کہ بھارت کشمیریوں کو تشدد کا نشانہ بنا کر تحریکِ آزادی کو دبا نہیں سکتا۔ پاکستانی کشمیر کی آزادی کی تحریک میں برابر کے شریک ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں