ملیر، ضلع میں کرونا متاثرین کی تعداد 18 ہوگئی

ملیر (نامہ نگار، منظورسولنگی) کرونا وائرس نے جہاں پورے ملک میں لوگوں کو پریشان کیا ہے وہیں سندھ کے شہر کراچی میں گذشتہ روز 77 سالا کرونا کا مریض فوت ہو نے کے بعد مزید خوف پھیل گیا ہے۔ اس سلسلے میں صرف ضلع ملیر میں کورونا وائرس کے 18 مریض ظاہر ہوئے ہیں جن میں 15 مریضوں کو گھروں تک محدود رکھ کر نگرانی میں رکھا گیا ہے جب کہ 3 مریضوں کو گڈاپ آئسوليشن وارڈ میں داخل کر کے علاج کیا جارہا ہے۔
ضلع میں ڈی ایم سی ملیر کی جانب سے لانڈھی کے علاقے میں کرونا سے بچاؤ کے حوالے سے آگہی کیمپ قائم کی گئی ہے جہاں کارکنان پمفلٹ اور ماسک تقسیم کر رہے ہیں۔ دوسری جانب ملیر کے شہری اور دیہاتی علاقوں گلشن حديد، پپری، قائد آباد، مراد میمن گوٹھ، گڈاپ، شرافی گوٹھ ،ملیر سٹی، بکرا پڑی، سبزی منڈی، نادرن بائی پاس اور دیگر علاقوں میں روزانہ بڑی تعداد میں مختلف صوبوں اور ملکوں کی جانب گئے لوگوں کی واپسی کے اطلاعات ہیں جن کی کوئی بھی ٹیسٹ ہو پائی ہے اور نہ ہی وہ اپنا ٹیسٹ کرانے میں دلچسپی رکھتے ہیں۔
اس سلسلے میں ملیر میں کرونا وائرس کنٹرول پروگرام کے فوکل پرسن صوبائی وزیر مرتضیٰ بلوچ سے رابطہ کیا گیا تو ان کا کہنا تھا کے وائرس تیزی سے پھیل رہا ہے۔ اندیشہ ہے کہ کافی لوگ اس کی لپیٹ میں آجائیں گے عوام حکومت کے ساتھ تعاون نہیں کرے گی تو اس کے نتائج خراب نکلیں گے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں