کراچی، سندھ بھر میں لاک ڈاؤن دوسرے روز بھی جاری

کراچی (ویب ڈیسک) کرونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے حکومتِ سندھ کی جانب سے نافذ کردہ 15 روزہ لاک ڈاؤن دوسرے دن بھی جاری رہا۔ تمام شہروں میں کاروباری مراکز بند ہونے کی اطلاعات ہیں جبکہ سڑکیں بھی سنسان ہیں اور لوگ اپنے گھروں میں محصور ہیں۔
ٹھٹھہ سے نمائندہ یونائیٹڈ ٹی وی رشید جاکھرو کے مطابق شہر کے اہم کاروباری مراکز شاہی بازار، پھول بازار، مچھلی مارکیٹ، چاندنی چوک اور مرکزی بس اسٹاپ پر سناٹا دیکھا گیا۔ گھارو، گجو، ساکرو، گھوڑاباری اور گاڑہو سمیت ضلع بھر کے چھوٹے بڑے شہروں میں بھی لاک ڈاؤن جاری ہے۔ جس کے دوران پاک فوج، پولیس اور رینجرز کا گشت بھی جاری رہا تاہم لاک ڈاؤن کے باعث اشیائے خوردنوش کی رسد نہ ہونے کی وجہ سےشہر میں کھانے پینے کی اشیاء کی قلت کا اندیشہ ظاہر کیا جا رہا ہے۔
نوشہروفیروز سے نامہ نگار عدنان عظیم نے رپورٹ کیا ہے کہ لاک ڈاؤن کے دوسرے روز فضول گھومنے والے شہریوں اور ڈبل سواری والے نوجوانوں کو محراب پور پولیس نے مختلف چوراہوں اور سڑکوں پر اٹھک بیٹھک سمیت دیگر جسمانی سزائیں دیں۔ اطلاعات کے مطابق کنڈیارو میں فضول گھومنے والے 9 شہریوں کو گرفتار کرکے مقدمہ ددرج کردیا گیا ہے۔
دادو سے نامہ نگار فیاض جعفری نے بتایا ہے کہ دیگر شہروں کی طرح دادو میں بھی لاک ڈاؤن دوسرے روز جاری رہا۔ اس موقع پر موٹرسائیکل کی ڈبل سواری پر پابندی عائد کی گئی ہے تاہم لاک ڈاؤن کی خلاف وزری کرنے والے درجنوں افراد گرفتار بھی کیے گئے ہیں جن کو تھانہ منتقل کرکے مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ ڈبل سواری پر پابندی کی خلاف ورزی کرنے پر گرفتاریاں عمل میں لائی گئی ہیں۔
دوسری جانب لاک ڈاؤن کے باعث کاشتکار مشکل میں پڑ گئے ہیں۔ گندم کی تیار فصل کی کٹائی نہ ہوسکی۔ پولیس و انتظامیہ نے تھریشر والوں کو بھی بھگادیا۔ کاشتکاروں کا کہنا ہے کہ گندم کی فصل کی کٹائی وقت پر نہ ہوئی تو بھاری نقصان کا سامنہ ہوگا۔ بارش کا امکان ہے، بارش کے باعث تیار فصل کے خراب ہونے کا بھی خدشہ ہے۔
جیکب آباد سے نامہ نگار رمضان ابڑو کے مطابق لاک ڈاؤن کے دوسرے روز اشیائے خوردنوش کی دکانوں کے علاوہ تمام کاروباری مراکز اور ٹرانسپورٹ مکمل بند رہی تاہم دفعہ 144کی خلاف ورزی کرتے ہوئے موٹرسائیکل پر ڈبل سواری پر پابندی پر عمل نہیں ہو سکا۔ شہر کے کچھ علاقوں میں لاک ڈاؤن کے باوجود بھی لوگ سڑکوں پر گھومتے رہے۔ پولیس اور موٹرسائیکل سواروں میں کشیدگی کی بھی اطلاعات ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں