مستحقین میں راشن کی فراہمی، جانئے ڈپٹی کمشنرگھوٹکی کی کارکردگی کیا رہی؟

کراچی (بیورو رپورٹ) سندھ میں کرونا وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے حکومتِ سندھ کی جانب سے نافذ کردہ لاک ڈاؤن کے دوران ہزاروں افراد جن کا ذریعہِ معاش روزانہ کی کمائی پر ہوتا ہے، بیروزگار ہو چکے ہیں اور معاشی قتل کے دہانے پر ہیں۔ اس صورتحال سے نمٹنے کے لئے حکومتِ سندھ نے اعلان کیا تھا کہ صوبہ بھر میں مستحقین کو راشن کی فراہمی صوبائی حکومت کی ذمہ داری ہوگی اور حکومتِ سندھ کے ایسے اعلان کو صوبہ بھر میں پذیرائی ملی تھی۔
ان تمام تر اعلانات کے بعد حکومت کی جانب سے ضلعی انتظامیہ کو رقوم کی فراہمی کی گئی تھی جس کے بعد تمام اضلاع کی انتظامیہ کو ذمہ داری دی گئی تھی کہ وہ اپنے اپنے اضلاع میں مستحقین کی معاونت کریں۔ مختلف اضلاع میں ضلعی حکومتوں کی کارکردگی جاننے کے لئے یونائیٹڈ ٹی وی کی جانب سے ضلعی انتظامیہ سے رابطہ کیا گیا ہے اور ان سے تقسیم کیے گئے راشن کی تفصیلات حاصل کرلی گئی ہیں۔
کرونا وائرس کے دوران سندھ میں مستحقین کی مدد سے متعلق ڈپٹی کمشنر گھوٹکی خالد سلیم کی یونائیٹڈ ٹی وی سے خصوصی گفتگو۔
ڈی سی کے مطابق گھوٹکی انتظامیہ کو حکومتِ سندھ کی جانب سے 3 کروڑ 70 لاکھ روپے ملے تھے جن میں سےراشن کے 15000 تھیلے بنائے گئے تھے۔ اب تک پہلے مرحلے میں ضلع بھر کے مستحقین میں8000راشن کے تھیلے دیئے گئے ہیں تاہم مزید 7000 تھیلے جلد دیئے جائیں گے۔
ڈی سی گھوٹکی کی جانب سے یونائیٹڈ ٹی وی کو دی گئی تفصیلات میں مزید بتایا گیا کہ ضلع میں پانچ تحصیلیں ہیں۔ تحصیل سطح پر راشن کی تقسیم کی ذمہ داری اسسٹنٹ کمشنر کو دی گئی تھی۔ تحصیل گھوٹکی میں دو ہزار، خانگڑھ میں ایک ہزار 75، میرپور ماتھیلو میں ایک ہزار پانچ سو، ڈہرکی میں دو ہزار جبکہ اوباوڑو میں ایک ہزار تین سو 75 تھیلے تقسیم کیے گئے ہیں۔ خیال رہے کہ تحصیل سطح کی یہ تفصیلات پہلے مرحلے کی ہیں جبکہ ڈی سی گھوٹکی کے مطابق دوسرے مرحلے میں راشن کی تقسیم کا آغاز جلد کیا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں