سکھر، وزیرِ اعلیٰ سندھ کی دورے کے دوران پریس کانفرنس

سکھر(نامہ نگار، علی کھوسو) وزیرِاعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے دورہِ سکھر کے دوران کمشنر آفیس میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کرونا سے متعلق بتایا کہ کل تک پورے صوبے میں 1626 ٹیسٹ کئے جبکہ کرونا کے 340 مثبت کیس آج سامنے آئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سکھر ہمارا فرنٹ لائن تھا کیوں کہ ایران سے 1388 زائرین آئے جن میں سے 280 مثبت کیسز آئے تھے جبکہ 7 لاڑکانہ سے سکھر آئے تھے۔ 271 ٹھیک ہو چکے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ سکھر میں 7 کورونا کے مریض موجود ہیں باقی سب اپنے گھر چلے گئے ہیں جبکہ سندھ بھر میں 576 صحتیاب ہوچکے ہیں اور اب تک صوبے بھر میں کرونا وائرس کے باعث 45 اموات ہوئی ہیں۔
پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیِراعلیٰ سندھ نے بتایا کہ سکھر آنے کا مقصد یہ تھا کہ یہاں کے مقامی لوگ کرونا کے شکار زائرین کی باعث پریشان تھے جس پر انہوں نے سکھر کی عوام کی جانب سے تعاون پر انہیں یقین دلایا کہ بہترین حکمتِ عملی سے لیبر کالونی کوقرنطینہ بنایا گیا۔ مراد علی شاہ نے بتایا کہ لاک ڈاؤن سےہم خوش نہیں لیکن اسکے بغیر اور کوئی راستہ بھی نہیں۔ وزیرِاعلیٰ سندھ نے عوام سے درخواست کرتے ہوئے کہا کہ اپنی مدد خود کریں تو اللہ پاک بھی مدد کرے گا۔ آپ پر فرض ہے کہ گھروں میں جانے سے قبل اپنے ہاتھ دھوئیں، باہر سے آکر اپنے کپڑے تبدیل کریں، خود کو بزرگوں اور بچوں سے دور رکھیں اور جتنا ہو سکے صحت کے اصولوں پر زندگی گزاریں کیوں کہ اس وائرس کا علاج صرف و صرف دور رہنے میں ہے ابھی اس کا علاج نہیں، صرف احتیاط ہی علاج ہے۔ انہوں نے صحافی حضرات سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ میڈیا کے دوست اپنا خیال رکھیں۔ آپ کی زندگی آپ کے پیاروں کیلئے اہم ہے۔ مراد علی شاہ نے کہا کہ ہم نے کارروائی کی ہے، ہم نے فیصلےکیئے ہیں، ہوسکتا ہے غلط فیصلے کئے ہوں، لیکن فیصلہ نہ لینا جرم ہے، نااہلی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ سندھ کے اندر کچھ زائرین براستہ سڑک آئے اور دیگر جہاز کے ذریعےآئے۔ جو جہاز کے ذریعے آئے، ان میں 96 مثبت کیسز آئے۔ انہوں نے بتایا کہ کرونا کے 1165 کیسز مقامی ٹرانسمیشن کے ہیں۔ شروع میں 80 ٹیسٹ کرنے کی گنجائش تھی جس کو بڑھانے کیلئے پی سی آر مشینیز چاہئیں تھیں اور بائیو-سیفٹی لیب کے علاوہ آپ ٹیسٹ نہیں کرسکتے، ہم نے ٹیسٹ کی گنجائش کو بڑھا کر 1700 تک لے گئے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ہم کوشش کر رہے ہیں کے ڈویژنل سطح پر کرونا وائرس کے ٹیسٹ کرنے کا بندوبست کیا جائے ۔ مراد علی شاہ نے کہا کہ میں نے لاک ڈاؤن کیلئے درخواست کی ہے۔ ڈبل سواری پر پابندی لگائی ہوئی ہےاور ہم شفاف طریقہ سے راشن تقسیم کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ میں 5 بجے واپس کراچی پہنچنا چاہتا ہوں۔ لاک ڈاؤن سے پہلے پہنچنا ضروری ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں