سکھر اے ٹی سی عدالت میں میہڑ واقعے کی سماعت؛ ام رباب عدالت میں احتجاجن ننگے پاؤں پیش ہوئی


سکھر (ویب ڈیسک) حوا کی بیٹی اپنے دادا، والد اور چچہ کے قاتلوں کو سزا دلوانے کے لئے در در کی ٹھوکریں خانے پر مجبور ہوگئی۔ سکھر انسداد دہشتگردی عدالت میں کرم اللہ چانڈیو، مختیار چانڈیو، قابل چانڈیو قتل کیس کی سماعت ہوئی۔ کیس کی سماعت ای ٹی سی جج آنند رام نے کی۔ جس دوران سکھر عدالت نے کیس کی سماعت 15 جون تک ملتوی کردی۔ سماعت کے دوران ام رباب چانڈیو اپنے خاندان سے انصاف کیلئے عدالت میں احتجاجن ننگے پاؤں پیش ہوئی۔ میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے ام رباب چانڈیو کا کہنا تھا کہ ملزمان کی جانب سے کیس سے ہاتھ اٹھانے کیلئے دہمکیاں دی جا رہی ہیں۔ میرے ملک میں امیر کے لئے الگ اور غریب کے لئے الگ قانون کیوں ہے۔ باہمت باپ کی باہمت بیٹی ہوں مرتے دم تک اپنے حق کے لئے لڑونگی ،چاہے کتنی بھی ڈمکیاں ملیں۔ ان کا کہنا تھا کہ قاتل کتنے ہی ہتھکنڈے استعمال کریں میں ان کو انکے انجام تک پہنچاکردم لونگی۔ واضع رہے کہ میہڑ میں کرم اللہ چانڈیو، مختیار چانڈیو اور قابل چانڈیو قاتلانہ حملے میں جاں بحق ہوئے تھے۔ جاں بحق ہونے والوں کے ورثا کے مطابق ایم پی اے سردار خان چانڈیو اور انکے بھائی ایم پی اے برہان خان چانڈیو نے حملہ کروایا ۔ تاہم دونوں ملزماں کا تعلق موجودہ حکمران جماعت پیپلز پارٹی سے ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں