ٹھٹھہ، منشیات کے خلاف خبر پر صدر پریس کلب دھمکیوں کی زد میں

ٹھٹھہ (نامہ نگار، رشید جاکھرو) پریس کلب مکلی کے صدر کی جانب سے منشیات فروشوں کے خلاف خبریں چلانے پر منشیات فروش آگ بگولہ ہوگئے۔ صدر اعجاز واریو کو قتل کرنے اور سنگین نتائج بھگتنے کی دھمکیاں دی گئی ہیں۔ منشیات فروشوں کا کہنا ہے کہ پولیس اور صحافی ہمارا کچھ نہیں بگاڑ سکتے۔
واقعے کے خلاف کراچی، حیدرآباد، سکھر، نوابشاہ، لاڑکانہ، جیکب آباد، بدین، ٹھٹہ اور سجاول ضلعوں سمیت اسلام آباد، لاہور، خیبر پختونخواہ اور بلوچستان کے صحافیوں نے سخت الفاظ میں مذمت کی ہے۔ صحافیوں نے صدرِ پاکستان، وزیرِاعظم، وزیرِ اعلیٰ سندھ، آئی جی سندھ اور ایس ایس پی ٹھٹھہ سے مطالبہ کیا ہے کہ ٹھٹھہ کے منشیات فروشوں کو سخت سے سخت سزا دلوائیں بصورت دیگر پورے ملک کے صحافی سراپا احتجاج بن جائیں گے۔
دوسری جانب متحده قومی موومنٹ (پاکستان) تنظیم بحالی کمیٹی ضلع ٹھٹھہ کے ضلعی آرگنائزدر محمد جنید صدیقی واراکین ضلعی کمیٹی نے اپنے ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ سینیئر صحافی و اے آر وائی کے ضلعی رپورٹر اور ضلعی پریس کلب مکلی کے صدر اعجاز احمد واریو کو نام نہاد منشیات فروشوں کی جانب سے سنگین نتائج بھگتنے کی دھمکیاں دینے پر سخت الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔
انہوں نے کہا کہ سندھ ہائی کورٹ کے سخت احکامات اور قانون عمل میں آنے کے باوجود بھی منشیات خور ایک تو منشیات فروخت کرکے لوگوں کی زندگی سے کھیل رہے ہیں اور اوپر سے صحافیوں کی نشاندہی اور آواز بلند کرنے پر الٹا ان کو سنگین نتائج بھگتنے کی دھمکیاں دی جا رہی ہیں۔ یہ ایک ناقابلِ معافی عمل ہے۔
انہوں نے ایس ایس پی ٹھٹھہ اور آئی جی سندھ سے مطالبہ کیا ہے کہ سینیئر صحافی اعجاز واریو کو دھمکیاں دینے والے نام نہاد منشیات فروشوں کو جلد از جلد گرفتار کیا جائے۔ انہوں نے مزید کہا ہے کہ سینیئر صحافی کی جانب سے منشیات فروشوں کے خلاف دلیرانہ اور بہادرانہ رپورٹنگ کرکے ان کی نشاندہی اور آواز بلند کرنے والے عمل پر سربراہ ایم کیو ایم (پاکستان) تنظیم بحالی کمیٹی ڈاکٹر فاروق ستار اور ان کی پارٹی کے تمام ذمہ داران کی جانب سے خراجِ تحسین پیش کیا جاتا ہے اور ان کے اس بہترین عمل پر ان کےشانہ بشانہ کھڑے ہیں۔

اپنا تبصرہ بھیجیں