ملیر، ریڑہی گوٹھ چوروں کی آماجگاہ بن گیا، پولیس لاپتہ

ملیر (نامہ نگار، منظورسولنگی) ریڑہی گوٹھ چوروں کی آماجگاہ بن گیا۔ ایک ہفتہ کے اندر متعدد دکانیں لوٹ لی گئیں۔ تفصیلات کے مطابق ملیر کے ساحلی علاقے ریڑہی گوٹھ میں بدامنی میں اضافہ ہوگیا ہے۔ گذشتہ ایک ہفتے میں چوروں نے متعدد گھروں اور دکانوں کا صفایا کر کے لاکھوں روپے کا سامان اور نقدی چوری کر لیا۔ گذشتہ روز ریڑہی گوٹھ کے باقر شاہ جنرل اسٹور میں چوروں نے دکان کے تالے توڑ کر لاکھوں روپے کے سامان سمیت 35 ہزار نقدی چوری کر لیے۔ مسلسل چوری کے واقعات کے باعث ریڑہی گوٹھ کے مکینوں میں عدم تحفظ اور خوف پھیل گیا۔
علاقہ مکین تاجر باقر شاہ، علی خاصخیلی، اختر علی اور دیگر کا کہنا تھا کہ سکھن تھانہ پولیس جرائم پیشہ افراد کے سامنے بے بس بنی ہوئی ہے۔ کوئی ایسا دن اور رات نہیں گزرتی جب دکان اور گھروں سے چوری نہیں ہوتی۔ چور بے خوف ہو کر چوری کی وارداتیں کر رہے ہیں جن پر کوئی قابو پانے والا نہیں جبکہ ریڑہی گوٹھ کے مکین جاگ کر راتیں گزارنے پر مجبور ہیں۔ علاقہ مکینوں نے مزید بتایا کہ پورا علاقہ غریب ماہیگیروں پر مشتمل ہے جن کے مرد اور عورتیں ماہیگیری کر کے اپنے بچوں کا پیٹ پالتے ہیں۔
انہوں نے ایس ایس پی ملیر سے مطالبہ کیا کہ ریڑہی گوٹھ میں پولیس کا گشت بڑھا کر غریب ماہیگیروں کو تحفظ فراہم کیا جائے اور چوری کی وارداتوں میں ملوث عناصر کے خلاف کارروائی کر کے انہیں گرفتار کیا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں