ملیر، ڈی ایم سی کی اربوں روپوں کی بجٹ ہڑپ، علاقہ مکینوں کی چیخ و پکار

ملیر (نامہ نگار، منظورسولنگی) ملیر کے بلدیہ اعلیٰ نے مقامی آبادیوں کو نظر انداز کر دیا۔ تین سال گذرنے کے باوجود صاحبداد گوٹھ، آسو گوٹھ، شرافی گوٹھ، گل محمد کلمتی ودیگر آبادیاں سڑک و سیوریج سمیت تمام ترقیاتی منصوبوں سے محروم۔
ضلع ملیرکے شہری علاقوں پر مشتمل بلدیاتی ادارے ڈسٹرکٹ میٹروپولیٹن کارپوریشن کی سالانہ اربوں روپے کی بجٹ کے باوجود مقامی ا ٓبادیاں نظر انداز کرد ی گئیں ہیں جن میں صاحبداد گوٹھ، آسو گوٹھ، شرافی گوٹھ، گل محمد کلمتی سمیت دیگر آبادیاں شامل ہیں جو 3 سال گزرنے کے باوجود سڑک و سیوریج سمیت تمام ترقیاتی منصوبوں سے محروم نظر آتے ہیں۔ ان علاقوں کے گھروں، گلیوں، سکولوں اور مساجد کے سامنے سیوریج کا گندہ پانی بڑی مقدار میں موجود ہے جو تاحال نہیں نکالا گیا۔

علاقہ مکینوں نے کہا کہ مسجد کا کسی سیاسی پارٹی سے واسطہ تو نہیں ہے پھر بھی گندہ پانی 3 ماہ سے موجود ہے۔ منتخب بلدیاتی نمائندوں کو کئی بار تحریری شکایات کر چکے ہیں لیکن کچھ بھی نہیں ہوا۔ انہوں نے کہا کہ ڈی ایم سی کی اربوں روپے کی بجٹ کہاں خرچ کی جاتی ہے؟ کوئی پوچھنے والا نہیں ہے۔ اینٹی کرپشن نے ڈی ایم سی آفس پر چھاپہ مار کر ثبوت حاصل کیے تھے لیکن لین دین کے بعد معاملہ خاموشی اختیار کر گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں