ملیر، سوشل سیکیورٹی ہسپتال میں سہولتوں کا فقدان

ملیر (نامہ نگار، منظورسولنگی) ڈی ایم سی ملیر کی حدود میں واقع لانڈھی سوشل سیکورٹی ہسپتال میں گذشتہ روز جڑے ہوئے دو جڑوا بچوں کی پیدائش ہوئی جن میں سے ایک بچے کی حالت تشویشناک بتائی جا رہی ہے۔ بچوں کو جناح ہسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔ اس سلسلے میں علاقے کی ایکشن کمیٹی کے عہدیداروں نے ہسپتال میں صفائی کا ناقص نظام ہونے پر احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ سالانہ اربوں روپے کمانے والا محکمہِ سوشل سیکیورٹی آج تک مزدوروں کے لیے لانڈھی ہسپتال میں ایک بھی ایسا وارڈ نہیں بناسکا جہاں علاج معالجے کی ہر سہولت موجود ہو۔

سماجی رہنماؤں کا مزید کہنا تھا کہ بچوں کے وارڈ کی صورت حال یہ ہے کہ ایک ایک بیڈ پر چار چار معصوم بیمار بچے زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہے ہیں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ مذکورہ ہسپتال میں آدھے سے زیادہ عملہ غیر تربیتی اور سفارشی ہے جو صبح 9 بجے شروع ہونے والی اوپی ڈی دن 1 بجے بند کرکے گھروں کو روانہ ہوجاتا ہے۔ صفائی کے انتہائی ناقص انتظامات ہیں ۔ پورے ہسپتال میں کتوں اور بلیوں کی بھرمار اور وارڈوں میں انکی غلاظت کے ڈھیر لگے ہوئے ۔

اپنا تبصرہ بھیجیں