دادو، لاک ڈاؤن کے باوجود رفیق جمالی کے گھر کا گھیراؤ

دادو (نامہ نگار، فیاض جعفری) سندھ بھر میں لاک ڈاؤن کا چوتھا روز۔ دادو میں تمام چھوٹے بڑے کاروباری مراکز مکمل طور پر بند ہیں تاہم شہری لاک ڈاؤن کی دھجیاں اڑاتے ہوئے گھروں سے باہر نکل آئے۔ گھر کا چولہا ٹھنڈا ہونے پر شہریوں نے اپنے بیوی بچوں کے ہمراہ پیپلز پارٹی کے رکن قومی اسیمبلی رفیق جمالی کے گھر کا گھیراؤ کیا اور “راشن دو” کی مانگ بھی کرتے رہے۔
اس موقع پر جمالی ہاؤس کے باہر راشن لینے والوں کا ہجوم لگ گیا۔ ہجوم میں شامل شہریوں کو منتشر کرنے کے لیے پولیس اور ضلعی انتظامیہ بھی بے بس دکھائی دی۔ شہریوں نے راشن نہ ملنے پر عورتوں اور بچوں کے ہمراہ احتجاجی مظاہرہ کرتے ہوئے کہا کہ راشن لینے آئے ہیں، دہاڑی پر مزدوری کرتے ہیں۔ گھروں میں راشن ختم ہوگیا ہے، راشن نہ ہونے سے گھرون میں فاکا کشی ہے۔ حکومتِ سندھ مالی معاونت کرے اور راشن کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔
شہریوں کے ہجوم کے باعث کرونا وائرس کے پھیلاؤ کا بھی خدشہ پیدا ہوگیا تاہم پولیس اور ضلعی انتظامیہ کہیں بھی لاک ڈاؤن پر عملدرآمد کے لیے دکھائی نہیں دی۔ رابطہ کرنے پر رکن قومی اسیمبلی رفیق جمالی کے بھائی سعید جمالی اور ضلعی انتظامیہ کا موقف تھا کہ لوگ اپنے گھروں میں رہیں، لوگوں کو اپنے اپنے گھروں میں راشن دیا جائے گا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں