ملیر، راشن نہ ملنے پر علاقہ مکینوں کا احتجاج، اقرباپروری کے الزامات

ملیر (نامہ نگار، منظور سولنگی) ابراہیم حیدری، رزاق آباد، پپری ،پیرسرہندی گوٹھ سمیت مختلف علاقوں کے مکین لاک ڈاؤن کے دوران تاحال راشن کی فراہمی سے محروم ہیں۔ متاثرہ لوگوں نے راشن تقسیم میں منتخب نمائندوں پر اقرباپروری کا الزام عائد کیا ہے۔ اس سلسلے میں گذشتہ روز ابراہیم حیدری کے یونین کونسل 17 حیدر شاہ میں راشن سے محروم مکینوں جن میں عورتوں اور بچوں کی بڑی تعداد شامل تھی، گھروں سے باہر نکل آئے اور علاقے کے ایم این اے اور ایم پی اے کے خلاف سخت نعرے بازی کرتے ہوئے حکومت سے راشن دینے کا مطالبہ کیا۔
اس موقع پر یوسی حیدر شاہ کے چیئرمین غلام حسین چارن نے صحافیوں کو بتایا کہ ڈی سی ملیر کو یوسی کے مستحقین کی فہرست بنا کر دی لیکن انہوں نے علاقے کے ایم پی اے کے کہنے پر اس کو مسترد کر کے اپنی مرضی سے راشن تقسیم کیا جس کے باعث بڑی تعداد میں مستحقین محروم ہوگئے۔ اس عمل کے خلاف یوسی میں غم و غصے کی لہڑ دوڑ گئی ہے۔ انہوں نے اقربا پروری کے خلاف گذشتہ روز کمشنر کراچی اور ڈی جی رینجرز کے آفس پہچن کر تحریری شکایت بھی جمع کروائی ہے۔

دوسری جانب رزاق آباد کے غریب آباد، کلمتی، شیخ محلے سمیت دیگر محلوں کے مکینوں نے علاقے کے با اثر سیاسی افراد کی جانب سے ملنے والے راشن پر قبضہ کر کے غیر مستحقین میں راشن تقسیم کرنے کے خلاف احتجاجی مظاہرہ کیا۔ اس موقع پر محبوب کلمتی، فیض سندھو، محمد اقبال کلمتی اور دیگر کا کہنا تھا کہ لاک ڈاؤن کے دوران رزاق آباد میں ہم غریب دہاڑی دار مزدوروں کو راشن کی تقسیم میں سیاسی طور پر اکیلا کر کے نظرانداز کیا جارہا ہے۔ منتخب نمائندوں کو شکایت کرتے ہیں تو وہ برہمی کا اظہار اظہار کرتے ہیں تو پھر ہم کس سے شکایت کریں؟ انہوں نے مطالبہ کیا کہ غیر جانبدارانہ کمیٹی تشکیل دے کر مستحق افراد میں راشن تقسیم کیا جائے۔
پپری کے مکینوں امام بخش، وریل گبول، الہورایو،حضور بخش، محمد اسلم گبول نے مظاہرہ کرتے ہوئے چیئرمین پر الزام عائد کیا کہ انہوں نے رات کے اندھیرے میں راشن کی تقسیم میں اپنوں کو نوازا ہے جب کہ پپری کا سارا علاقہ مزدور افراد پر مشتمل ہے جہاں لوگ دہاڑی لگا کر اپنے بچوں کا پیٹ پالتے ہیں لیکن لاک ڈاؤن کے باعث کام بند ہے جس سے ان کے بچے بھوک میں مبتلا ہیں۔ پیر سرہندی گوٹھ، ریڑھی گوٹھ، عبداللہ گوٹھ، شیدی گوٹھ اور دیگر علاقوں میں مکینوں نے راشن نہ ملنے کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے حکومت سے اپیل کی گئی ہے کہ انہیں راشن فراہم کرنے کا بندوبست کیا جائے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں