ٹھٹھہ، ٹینڈر قوانین نظرانداز، محکمہِ نکاسی آب میں کرپشن کا انکشاف

ٹھٹھہ (نامہ نگار، رشید جاکھرو) محکمہِ نکاسیِ آب اور سجاول میں سیم نالوں کی صفائی اور دیگر ترقیاتی کاموں کے کروڑوں روپے کے ٹھیکوں میں بڑے پیمانے پر جعلسازی و کرپشن کا انکشاف سامنے آیا ہے۔ یونائیٹڈ ٹی وی کو ملنے والی تفصیلات کے مطابق بااثر انجنئیر نکاسیِ آب عبدالرحیم قریشی نے سیپرا قوانین کو نظر انداز کردیا۔ سرکاری تعطیل اور ٹینڈرز کمیٹی میمبران کی عدم موجودگی کے باوجود ترقیاتی کام کا ٹھیکہ من پسند ٹھیکاداروں کو بھاری رشوت لیکر دیئے جانے کا انکشاف۔
متاثرین ٹھیکا داران کا شدید احتجاج۔ ٹھیکیدار عبدالمالک خان نے ایک ترقیاتی کام کی 23کروڑ بولی لگائی لیکن یہ کام من پسند ٹھیکیدار ایم ایس صفدر جتوئی کو 28کروڑ 72لاکھ میں جاری کیا گیا ۔ محکمہِ نکاسیِ آب ٹھٹھہ اور سجاول میں سیم نالوں کی صفائی اور دیگر ترقیاتی کاموں کے 50کروڑ روپے مالیت کے ترقیاتی کاموں کےٹینڈرز پروکیومنٹ کمیٹی کے میمبران کی عدم موجودگی کے باوجود سپیرا قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کھولنے کے بجائے جعل سازی کے ذریعے بھاری رشوت کے عوض خفیہ طور پر اپنے من پسند ٹھیدیراروں کو جاری کر دیئے گئے ہیں۔
متاثر ہونے والے ٹھیکیداروں نے تحقیقاتی اداروں، اعلیٰ عدلیہ اور چیف جسٹس پاکستان سے سرکاری خزانے کو ہونے والے نقصان کا نوٹس لینے کا مطالبہ کیا ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں