دادو، بجلی کی بندش نے عوام کی زندگی عذاب بنادی

دادو (نامہ نگار، فیاض جعفری) کرونا سے بھی بچاؤ کرنا ہے اور سماجی فاصلہ بھی برقرار رکھنا ہے۔ لوڈشیڈنگ سے تنگ شہری کا سیپکو کے خلاف پلے کارڈ اٹھائے احتجاجی مظاہرہ۔ احتجاج کرنے والے شہری محمد بخش کورائی کا کہنا تھا کہ ماہِ رمضان میں لوڈشیڈنگ کے خاتمے کے دعوے دھرے کے دھرے رہ گئے۔ سیپکو انتظامیہ 8 سے 12 گھنٹے تک کی لوڈشیڈنگ کر رہی ہے۔ اس نے مزید کہا کہ لاک ڈاؤن میں گھروں تک محدود ہیں، عبادتوں کا مہینہ ہے لیکن بجلی نہیں ہے۔ چاہتا تو باقی شہریوں کو ساتھ لے کر احتجاج کرتا لیکن کرونا سے احتیاط لازمی ہے۔ اس نے مطالبہ کیا کہ جس طرح عوام کو حکومتی اعلانات پر عمل کروایا جارہا ہے اسی طرح بجلی والوں کو بھی عمل کروایا جائے۔
دوسری جانب تحصیل میہڑ میں بھی بجلی کی لوڈشیڈنگ کے خلاف شہری رات گئے سڑکوں پر نکل آئے۔ بجلی کی غیر اعلانیہ 16 گھنٹے کی لوڈشیڈنگ کے خلاف شہریوں کا سیپکو کے خلاف احتجاجی دھرنا۔ دھرنے میں شامل شہریوں کی سیپکو حکام کے خلاف شدید نعریبازی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں